Mushahid Ullah Khan on Baluchistan issue and federal Govt failures

حکومت بلوچستان کے مسئلے کے حل کےلئے جنرل مشرف کی پالیسیوں پرعمل پیراہونے کی بجائے سیاسی اورجمہوری عمل کے ذریعے مسائل کاحل تلاش کرے ۔سینیٹرمشاہداللہ خان

مفاہمت کی دعویدارپیپلزپارٹی کی جانب سے بلوچ رہنماﺅں پروفاق کے خلاف بیان بازی دراصل جنرل مشرف کی غیرسیاسی اورغیرجمہوری پالیسیوں کا تسلسل ہے جس کا کسی بھی جموری دورمیں تصوربھی نہیں کیاجاسکتا۔

بلوچستان کے عوام کوکوئی شک نہیں کہ آغازحقوق بلوچستان کے نام پردیاجانے والا پیکج دراصل حکومتی اتحادیوں کے درمیان بندربانٹ ہے اوراس کے علاوہ کوئی بھی قابل ذکرچھوٹاےابڑا ترقیاتی ےاعوامی منصوبہ تک شروع نہیں کیاگیا،مرکزی سیکرٹری اطلاعات پاکستان مسلم لیگ(ن)

(     )
پاکستان مسلم لیگ(ن) کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات سینیٹرمشاہداللہ خان نے کہاہے کہ حکومت بلوچستان کے مسئلے کے حل کےلئے جنرل مشرف کی پالیسیوں پرعمل پیراہونے کی بجائے سیاسی اورجمہوری عمل کے ذریعے مسائل کاحل تلاش کرے ۔انہوں نے کہاکہ ےہ وقت ناراض بلوچ رہنماﺅں کا نہیں بلکہ انہیں مذاکرات پرآمادہ کرکے قومی دھارے میں واپس لانا ہے ۔انہو ںنے ان خیالا ت کا اظہاربلوچستان سے آئے ہوئے طلباءکے ایک وفدسے گفتگوکرتے ہوئے کیا۔مشاہداللہ خان نے کہاکہ مفاہمت کی دعویدارپیپلزپارٹی کی جانب سے بلوچ رہنماﺅں پروفاق کے خلاف بیان بازی دراصل جنرل مشرف کی غیرسیاسی اورغیرجمہوری پالیسیوں کا تسلسل ہے جس کا کسی بھی جموری دورمیں تصوربھی نہیں کیاجاسکتا۔انہوں نے کہاکہ حکومت بیان بازی کی بجائے بلوچستان کے مسائل کاحل سپریم کورٹ کے گذشتہ اورحالیہ احکامات کی روشنی میں حقیقت پسندانہ اندازسے جائزہ لے کرحل کرے اورتمام واقعات کی شفاف تحیقات کرکے سچ کوسامنے لائے تاکہ وفاق کی نقصان کرنے والے عناصرکی سرکوبی کی جاسکے ۔مشاہداللہ خان نے کہاکہ پاکستان مسلم لیگ(ن) برسراقتدارآکرملک بھرسے معاشی اورمعاشرتی ناہمواریوں کا خاتمہ کرکے عوام کی محرومیوں کا ازالہ کرکے پاکستان کومضبوط بنائے گی۔انہو ںنے کہاکہ بلوچستان کے عوام کوکوئی شک نہیں کہ آغازحقوق بلوچستان کے نام پردیاجانے والا پیکج دراصل حکومتی اتحادیوں کے درمیان بندربانٹ ہے اوراس کے علاوہ کوئی بھی قابل ذکرچھوٹاےابڑا ترقیاتی ےاعوامی منصوبہ تک شروع نہیں کیاگیا۔