Iqbal Zafar Jhagra’s press conference


پاکستان مسلم لیگ(ن) کے سیکرٹری جنرل اقبال ظفرجھگڑا کی پریس کانفرنس 
اسلام آباد(   )
پاکستان مسلم لیگ(ن) کے مرکزی سیکرٹری جنرل اقبال ظفرجھگڑانے کہاہے کہ حکومت ہندو برادری کوبھارت ہجرت کرنے سے روکنے کےلئے اقدامات کرے۔انہوں نے کہاکہ حکومت کو اس معاملے میں پہلے سے نوٹس لیناچاہیے تھالیکن حکومت نے کوتاہی برتی۔اقبال ظفرجھگڑانے کہاکہ موجودہ حکمرانوں نے اس سلسلے میں برترین گورننس کی مثال پیش کی ہے ۔انہوں نے کہاکہ پیپلزپارٹی کے موجودہ دورحکومت میں کسی کی جان ومال محفوظ نہیںہے ۔اقبال ظفرجھگڑا نے کہاکہ ملک میں اقلیتوں کے علاوہ مسلمانوں کے ساتھ بھی اغواءکے واقعات پیش آرہے ہیں ۔انہو ںنے کہاکہ پاکستان مسلم لیگ(ن) اورصدرپاکستان مسلم لیگ(ن) محمدنوازشریف اقلیتوں کے ساتھ ہیں ۔اقبال ظفرجھگڑا نے کہاکہ لفظ اقلیتیں کا لفظ ہی ختم کردیناچاہیے ،ہم سب سے پہلے پاکستانی ہیں ۔انہو ںنے ان خیالات کا اظہارپاکستان مسلم لیگ(ن) کے مرکزی سیکرٹریٹ میں اقلیتی رکن اسمبلی ڈاکٹردرشن اوررکن قومی اسمبلی طارق فضل چوہدری کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اقبال ظفرجھگڑانے کہاکہ جب سندھ میں ہندوڈاکٹروں کوقتل کیاگیاتو اس وقت بھی پاکستان مسلم لیگ(ن) کے قائدمحمدنوازشریف ان کے خاندانوں سے اظہارےکجہتی کےلئے ان کے گھروں میں گئے تھے اوران کادکھ درد بانٹا تھا۔انہوں نے کہاکہ اگرہم قائداعظم محمدعلی جناح کے افکارکواپناتے توآج ہم کو ایسے واقعات نہ دیکھنے کوملتے ۔انہوں نے کہاکہ قائداعظم نے 11اگست 1947ءکو اس کے بارے میں ارشادات فرمائے تھے ۔اقبال ظفرجھگڑانے کہاکہ حکومت اقلیتوں کا تحفظ کرنے میں ناکام ہوچکی ہے ۔انہوں نے کہاکہ پاکستان میں ہرشخص کومذہبی اورسیاسی آزادی حاصل ہے اورقائداعظم کے ارشادات پرعمل کرنے سے ہی پاکستان کے مسائل کم ہوسکتے ہیں ۔انہوں نے کہاکہ آج میڈیاآزاد ہے وہ اقلیتو ں کے حقوق کی حفاظت کےلئے بھی کردار اداکرے ۔اس موقع پرپاکستان مسلم لیگ(ن) کے اقلیتی رکن قومی اسمبلی ڈاکٹردرشن نے کہاکہ سندھ اوربلوچستان میں ہندووں کواغواءکیاجارہاہے ۔انہوں نے کہاکہ پہلے بڑے لوگوں کواغواءکیاجاتاتھا،پھربچوں کااغوا اورسیلاب کے دوران جولوٹ مارکی گئی تو ہندووں برادری نے ہجرت کاپروگرام بنالیالیکن جب پاکستان مسلم لیگ(ن) کے قائدمحمدنوازشریف نے سیلاب کے دوران صوبہ سند ھ کادورہ کیااوراقلیتوں کے ساتھ ےکجہتی کااظہارکرتے ہوئے ان کومکمل تحفظ فراہم کرنے کےلئے اقدامات کرنے کی ےقین دھانی کرائی۔ڈاکٹردرشن نے مزید بتایاکہ ہندوبرادری کوہجرت نہ کرنے کے بارے میں سمجھایاجس سے ہندووں نے ہجرت کرناختم کردیا۔انہوں نے کہاکہ جب بعد میں ہندولڑکیوں کو اغواءکرکے شادی کرکے عدالتوں میں پیش کیاجانے لگا۔انہو ںنے کہاکہ اس معاملے سے ملک کی دنیا بھرمیں بدنامی ہورہی ہے ،وفاقی اورسندھ حکومت نے ابھی تک اس سلسلے میں کوئی اقدام نہیں اٹھایاہے ۔انہوں نے کہاکہ ہم نے قومی اسمبلی میں تحریک التواءاورتحریک استحقاق جمع کرادیں ہیں ۔ایک سوال کے جواب میں اقبال ظفرجھگڑانے کہاکہ حکمران جماعت اپنے ایشوز پرتوجہ نہیں دے رہی ،ادارے تباہ ہورہے ہیں ،حکومت نے عدلیہ سے ٹکراﺅ کی پالیسی اپنارکھی ہے ۔انہوں نے کہاکہ پاکستان مسلم لیگ(ن) اورپوری قوم ہندووں کے ساتھ ہے اورانکے حقوق کی حفاظت کرے گی ۔اس موقع پررکن قومی اسمبلی ڈاکٹرفضل چوہدری نے کہاکہ سندھ میں پیپلزپارٹی کی حکومت ہے اوراس سلسلے میں اس پارٹی کے اراکین کے نام بھی لئے جارہے ہیں ،ایسے لوگوں کا ہندولڑکیوں کواغواءکرنالمحہ فکرےہ ہے ۔انہوں نے کہاکہ ہندووں کے عدم تحفظ کے خاتمے کےلئے ایک قانون بنانے کی ضرورت ہے ۔ڈاکٹرفضل چوہدری نے کہاکہ سندھ کے ایک رکن اسمبلی بھی ایسی ہی وجوہات کی بنیادپربھارت چلاگیاہے ۔جب اقبال ظفرجھگڑا سے نگران سیٹ اپ کے بارے میں سوال کیاگیاتوانہوں نے کہاکہ نگران حکومت کا معاملہ کھلے عام طے پائے گا ،20ویں ترمیم کے بعد نگران حکومت کاقیام کوئی مسئلہ نہیں رہاہے ۔انہوں نے ایک اورسوال کے جواب میں کہاکہ وزیراعظم کو عدالت میں پیش ہوجاناچاہیے ۔جب ان سے کپٹین صفدرکے معاملے کے بارے میں سوال کیاگیاتوانہو ںنے کہاکہ محمدنوازشریف کی واپسی کے بعد ےہ معاملہ خوش اسلوبی سے حل کرلیاجائے گا۔انہوں نے کہاکہ محمدنوازشریف کے فیصلے سے ثابت ہوگیاکہ محمدنوازشریف اصولوں کے سامنے کبھی بھی مصلحت کاشکارنہیں ہوتے ۔عمران خان کے 11سوالات کے بارے میں ان سے پوچھا گیاکہ توانہوں نے کہاکہ سلیمان شہباز ان سوالوں کے جوابات دے چکے ہیں ۔