Sartaj Aziz arrives in Washington as Pakistan, US look to strengthen strategic ties

WASHINGTON, Jan 26 (APP): National Security and Foreign Affairs Advisor Sartaj Aziz has arrived in Washington to lead Pakistan-U.S. StrategicDialogue with Secretary of State John Kerry on Monday, as the two countries look to finalize a blueprint aimed at bolstering future relationship. The top-level Pakistani delegation includes Minister for Defense, Water and Power Khawaja Muhammad Asif and senior officials. The American interlocutors will include senior level representatives from the Department of Energy, Overseas Private Investment Corporation, USAID, US Trade Representativeand from the Treasury. The officials will work to “put together a blueprint of where we can take this relationship over the course of the next six months to a year,” a State Department official said ahead of the revived ministerial dialogue that will focus on wide-ranging economic, energy and security areas.
Meanwhile, a report in the American media saw the dialogue as offering an opportunity for the United States and Pakistan to start a new chapter in their relationship, affected by years of Afghan war controversies.
The Voice of America noted that the war in Afghanistan strained thebilateral relationship. But now the U.S. is drawing down its troops fromAfghanistan, and Secretary of State John Kerry says it’s time to resume a strategic dialogue. The broadcast service also quoted a statement of John Kerryin which he said the U.S. is committed to a long-term relationship with Pakistan.
The U.S. State Department officials noted on Friday that Pakistan and the United States have greatly improved their relationship since 2011.
“I think the relationship has become quite good between President Barack Obama and Prime Minister Muhammad Nawaz Sharif. The Prime Minister had an excellent visit (in October 2013) here, a very comprehensive set of meetings,” a senior State Department official said.
Similarly, the official noted, Secretary Kerry had a good visit to Pakistan and established a good relationship with the National Security Advisor Aziz.
“So at a personal level I think people are comfortable with each other, they have gotten to know each other, and the dialogue can be very candid, a first-name basis sort of thing.”
Afghanistan will also be a major topic of discussion, amid uncertainty over the fate of bilateral security agreement between Washington and Kabul and the future of that country. But the U.S. officials say Washington-Islamabad relations are independent of current Afghan situation.
“We have a direct bilateral economic relationship with Pakistan. We’re Pakistan’s largest market.  We have an interest in Pakistan’s economicdevelopment. And we have an interest in Pakistan’s domestic security.  Pakistan is a large populous, nuclear-armed nation, and it is important that its constitutional order and democratic processes continue to be strengthened.  We have made a major investment in that. The Kerry-Lugar-Bermanmoney is not tied to Afghanistan,” a senior official said.
The Strategic Dialogue covers five areas of cooperation and detailed discussions take place at the level of working groups on energy, defense, strategic stability, economic and finance, and law enforcement and counterterrorism.
The last Strategic Dialogue at the ministerial level was held in 2010. The Pakistani side is likely to call for expansion in trade ties, particularly greater access for Pakistani products in the U.S. market in line with Prime Minister Muhammad Nawaz Sharif’s policy. (Courtesy: APP)

Railways’ deficit to reduce by fiscal year end: Saad

LAHORE, Jan 26 (APP): Railways Minister Khawaja Saad Rafique said on Sunday the department’s deficit would decrease by the end of current fiscal year.  Addressing a ‘meet the press’ at PR Headquarters here, he said the bureaucracy had started doing its work with dedication and officers even worked on holidays. Highlighting achievements of the Pakistan Railways (PR) since June 11, 2013, the minister said the PR would be able to successfully reduce its deficit despite excessive expenditure of Rs 3 billion on pensions, salaries and increased fuel prices.
He said the PR had earned Rs 3.43 billion more than the previous year with an income of Rs 12.87 billion during 200 days of the present government.
He said all corrupt officers had been removed and skilled and honest officers were deputed to run the Railways. “Not a single fresh appointment has been made except a transparently appointed director general public relations while director general legal will also be posted to activate the legal department,” he added.
He said the PR had been destroyed by former rulers through political interference. Freight was the most neglected sector as only one freight train was operational when the present government took over the charge. Now the present administration was operating four to five freight trains daily.
Saad said the Islamabad-Istanbul freight train would be restored soon and its linkage with India was also under consideration.
The minister said punctuality rate of trains was increased to 55 percent from 10 percent and there was still room for improvement.
Commenting on ex-Pakistan leave, he said a procedure had been develoved and no officer could go abroad without the permission of a technical committee. Several officers had returned from abroad and others would face legal action, he added.
He said 23 out of 58 locomotives would arrive from China by March, while the rest would reach here after August. “A latest workshop has been set up for their maintenance,” he added.
The minister said the PR was working on branding and it would soon earn billions of rupees through branding of several local and multinational companies. “Initially, three trains including Tezgam, Awam and Khaybermail express are going to be offered for branding on seat covers, internal walls of passenger coaches and toilets,” he added.
Additionally, he said, three railway stations including Lahore and Karachi were also being presented for branding and goods coaches were also under consideration for the same. (Courtesy: APP)

Nawaz Sharif chairs meeting to review security situation

PM Nawaz Sharif chaired a meeting to review the security situation in the country. The meeting was convened in the wake of recent terror incidents in Bannu, Peshawar, Rawalpindi, Mastung and Karachi.Chief of the Army Staff General Raheel Sharif briefed the Prime Minister about the existing security situation in the country. Different existing terror related legislations were also reviewed.The meeting was attended by Minister for Defence Khawaja Asif, Minister for Interior, Ch. Nisar Ali Khan, Minister for Information, Senator Pervaiz Rasheed, Minister for Finance, Ishaq Dar, Special Assistant to PM, Tariq Fatmi, Chief of the Army Staff, General Raheel Sharif, DG ISI, Lt. General Zahir-ul-Islam, Chief of General Staff, Lt. General Ashfaq Nadeem, DG MO, Maj. General Amir Riaz and DG MI, Maj. Gen. Sarfaraz Sattar.

Secretary Information addresses a group of students belonging to FATA

پاکستان کو فلاحی ریاست بناننے کا خواب چکنا چور نہیں ہونے دیں گے
کرپشن نے معیشت اور ادارے برباد کئے اور دہشت گردی نے معیشت کی بحالی کے لئے موجود انفراسٹرکچرتباہ کر ڈالا
فاٹا سمیت دیگر متاثرہ علاقوں میں ہر قیمت پر امن کی بحالی کو یقینی بنانے کے لئے تمام وسائل بروئے کار لار رہے ہیں
متاثرہ علاقوں کی تعمیر ِ نو کی لئے پرعزم ہیں تعلیم ، صحت اور روزگار کی فراہمی کے منصوبے بنائے جا رہے ہیں۔
ہم نے مذمتی بیانات کی بجائے عملی اقدامات کا آغاز کر دیا ، 7میں سے 6ایجنسیوں میں قانون کی رٹ قائم ہو چکی

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات سینیٹر مشاہد اللہ خان نے کہا ہے کہ پاکستان کو فلاحی ریاست بناننے کا خواب چکنا چور نہیں ہونے دیں گے ۔ کرپشن نے معیشت اور ادارے برباد کئے اور دہشت گردی نے معیشت کی بحالی کے لئے موجود انفراسٹرکچرتباہ کر ڈالا۔ انھوں نے کہا کہ ملکی کی ترقی فاٹا کی تعمیر و ترقی سے جڑی ہے ۔ فاٹا سمیت دیگر متاثرہ علاقوں میں ہر قیمت پر امن کی بحالی کو یقینی بنانے کے لئے تمام وسائل بروئے کار لار رہے ہیں ۔ دہشت گردی کے متاثرین کو زندگی کی تمام سہولیات مہیا کریں گے ۔ مشاہداللہ خان نے ان خیالات کا اظہار فاٹا سے آئے ہوئے طلباءسے ملاقات کے دوران کیا۔ انھوں نے کہا کہ متاثرہ علاقوں کی تعمیر ِ نو کی لئے پرعزم ہیں تعلیم ، صحت اور روزگار کی فراہمی کے منصوبے بنائے جا رہے ہیں۔ 2009ءمیں پارلیمنٹ کی طرف سے منظور کردہ 14نکاتی قرارد اد پر عمل ہوتا تو حالات مختلف ہوتے ۔ مشاہداللہ خان نے کہا کہ ہم نے مذمتی بیانات کی بجائے عملی اقدامات کا آغاز کر دیا ، 7میں سے 6ایجنسیوں میں قانون کی رٹ قائم ہو چکی ۔

Mushahidullah Khan answers queries of youth and media men in a special session

جو خود گذشتہ 15سال سے حکومتوں کی لوٹ کھسوٹ ، بدانتظامیوں اور غلط پالیسیوں کا حصہ رہے آج ہم پر تنقید کر رہے ہیں
غلط پالیسیوں کی وجہ سے ملک میں امن و امان کی صورتحال کو مخدوش اور غیر ریاستی عناصر کو پنپنے کا موقع ملا
حکومت نے ابتر حالات کے باوجود قلیل ترین مدت میں بین الاقوامی اداروں کا اعتماد بحال کیا ہے
حکومت کچھ ہی دنوں میں دہشت گردوں سے متاثرہ علاقوں کے لئے مزید نئے اور جامع منصوبوں کا بھی آغاز کرنے کا ارادہ رکھتی ہے ۔

پاکستان مسلم لیگ (ن) مرکزی سیکرٹری اطلاعات سینیٹر مشاہد اللہ خان نے کہ ہے کہ بھیانک مستقبل کی پیش گوئیاں کرنے والے ملک اور عوام کے خیر خواہ نہیں ۔ حکومت سنجیدگی اور مستقل مزاجی کے ساتھ امن و امان کے قیام اور معیشت کی بحالی کے لئے کوشاں ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جو خود گذشتہ 15سال سے حکومتوں کی لوٹ کھسوٹ ، بدانتظامیوں اور غلط پالیسیوں کا حصہ رہے آج ہم پر تنقید کر رہے ہیں۔ دہشت گردی اور بد حال معیشت ایک دوسرے کے ساتھ جڑے ہیں ۔ دونوں کو ٹھیک کرنے کے لئے قلیل المدتی اور طویل المدتی منصوبوں پر عمل شروع کردیا گیا ہے ۔ مشاہد اللہ خان نے کہا کہ غلط پالیسیوں کی وجہ سے ملک میں امن و امان کی صورتحال کو مخدوش اور غیر ریاستی عناصر کو پنپنے کا موقع ملا۔ گزشتہ 15سالوں میں نہ دہشت گردی کے عفریت سے مستقل چھٹکارا حاصل کرنے کے لئے کوئی پالیسی وضع کی گئی اور نہ ہی عوام کی زندگیوں میں بہتری لانے کے لئے کوئی تدبیر اختیار کی گئی ۔ انہوں نے کہا کہ آج مسلم لیگ (ن) کی حکومت کو ایک طرف ملک اور عوام دشمنی عناصر کی دہشت گردی کا چیلنج درپیش ہے تو دوسری طرف ملک کے انتظامی ڈھانچے کی از سرِ نو تشکیل کا مرحلہ درپیش ہے ۔ حکومت نے ابتر حالات کے باوجود قلیل ترین مدت میں بین الاقوامی اداروں کا اعتماد بحال کیا ہے ۔ عالمی ادارے اور بین الاقوامی ماہرین ِ معاشیات اس بات کا اعتراف کر رہے ہیں کہ پاکستان کی معیشت درست سمت میں چل پڑی ہے ۔ مشاہد اللہ خان نے ان خیالات کا اظہار اپنی رہائش گاہ پر بعض صحافیوں اور پارٹی کارکنان کے ساتھ سوال و جواب کی خصوصی نشست کے دوران کیا۔ مشاہد اللہ خان نے کہا کہ کچھ ہی دنوں میں ایک لاکھ نوجوانوں کو سرمایہ کاری کرنے کے لئے شفاف عمل کے نتیجے میں کاروبار کے لئے آسان ترین شرائط پر قرضہ دینے کے عمل کا آغاز ہوجائے گا۔ ایک سوال کے جواب میں انھوں نے کہا کہ ہم نے واویلا مچانے کی بجائے عملی اقدامات کا آغاز کر دیا ہے ۔ قبائلی علاقہ جات اور فاٹا کے نوجوانوں کو قرض کی رقوم کی ادائیگی سے انہیں ملکی دھارے میں شامل کر کے دشمن عناصر کی سازشوں کو شکست ہوگی۔ حکومت کچھ ہی دنوں میں دہشت گردوں سے متاثرہ علاقوں کے لئے مزید نئے اور جامع منصوبوں کا بھی آغاز کرنے کا ارادہ رکھتی ہے ۔ مشاہد اللہ خان نے کہا کہ دہشت گردی میں ملوث عناصر کو پسپا کرنے کے لئے طاقت کے استعمال کے ساتھ ساتھ عوام میں شعور کی بیداری اور ان کے ملکی اداروں پر اعتماد کی بحالی ازحد ضروری ہے ۔ انھوں نے کہا کہ بعض عناصر کی جانب سے وزیر اعظم اوروفاقی وزیر داخلہ پر بزدلی کے الزامات نہایت ہی لغو اور بے بنیاد ہیں ۔ الزامات لگانے والے اور بڑھکیں مارنے والے اگر سنجیدہ ہوتے تو آج دہشت گردی اس انتہا پر نہ پہنچ پاتی۔ اس سے زیادہ قابل مذمت ، بزدلی اور بے شرمی کی انتہا کیا ہوسکتی ہے کہ ہمیں بزدلی کا طعنہ دینے والوں نے آج تک اپنی شہید قائد محترمہ بےنظیر بھٹو کے مقدمے کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کے لئے ایک بھی سنجیدہ اقدام نہ کیا اور آج بھی وہ مقدمہ وہیں ہے جہاں سے 7سال قبل اس کا آغاز کیا گیا تھا۔

Senator Mushahidullah speaks to the students on terrorism and govt’s Counter Terrorism policy

ملک میں دہشت گردی کی لہر 14 سال سے جاری ہے ۔ گزشتہ حکومتوں نے اس مسئلے کے مکمل اور مستقل حل کے لئے بیانات اور مذمت کے علاوہ ٹھوس اقدامات نہ کئے
1997 ءمیں دہشت گردی کے خلاف قانون منظور ہوا اور اب ملکی تاریخ میں پہلی بار مسلم لیگ (ن) کی حکومت اس مسئلے کے حل کے لئے کاو ¿نٹر ٹیررازم پالیسی پیش کرنے جارہی ہے
دہشت گردی ایک قومی مسئلہ بن چکا عمران خان اس مسئلے پر غیر سنجیدہ طرز ِ سیاست اختیار کئے ہوئے ہیں
یہ کہنا نہایت ہی قابل ِ مذمت اور شرمناک ہے کہ بنوں حملے کے ذمہ دار وزیر اعظم نواز شریف ہیں
عمران خان ، نواز شریف کے خلاف سیاسی دشمنی سے ذاتی دشمنی پر اتر آئے
عمران خان قوم کو بتائیں کہ کیا انہیں خیبر پختونخوا کی حکومت بھی 11مئی کو ہونے والی تاریخی دھاندلی کے نتیجے میں ملی؟

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات سینیٹر مشاہد اللہ خان نے کہا ہے کہ ملک میں دہشت گردی کی لہر 14 سال سے جاری ہے ۔ گزشتہ حکومتوں نے اس مسئلے کے مکمل اور مستقل حل کے لئے بیانات اور مذمت کے علاوہ ٹھوس اقدامات نہ کئے۔ پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار مسلم لیگ (ن) ہی کے دور 1997 ءمیں دہشت گردی کے خلاف قانون منظور ہوا اور اب ملکی تاریخ میں پہلی بار مسلم لیگ (ن) کی حکومت اس مسئلے کے حل کے لئے کاو ¿نٹر ٹیررازم پالیسی پیش کرنے جارہی ہے جو کہ کابینہ کی منظوری کے بعد ملک کی سیاسی قیادت کے سامنے پیش کر دی جائے گی اور جلد ہی اس کے نتیجے میں قانون سازی کا آغاز ہوجائے گا۔ مشاہد اللہ خان نے ان خیالات کا اظہارمسلم لیگ (ن) کے مرکزی سیکرٹریٹ اسلام آباد میں راولپنڈی اور اسلام آباد سے آئے طلباءکے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ مشاہد اللہ خان نے کہا کہ دہشت گردی ایک قومی مسئلہ بن چکا عمران خان اس مسئلے پر غیر سنجیدہ طرز ِ سیاست اختیار کئے ہوئے ہیں۔ ہم دہشت گردی کے مسئلے پر قوم کو متحد اور یکجا کر کے دور رس کی اثرات کی حاصل پالیسیاں تشکیل دینا چاہتے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ عمران خان کے بیانات قومی وحدت اور یکجہتی کو نقصان پہنچانے کا سبب بن سکتے ہیں۔ یہ کہنا نہایت ہی قابل ِ مذمت اور شرمناک ہے کہ بنوں حملے کے ذمہ دار وزیر اعظم نواز شریف ہیں۔ عمران خان ، نواز شریف کے خلاف سیاسی دشمنی سے ذاتی دشمنی پر اتر آئے ۔ ان کے حالیہ بیانات ان کی بوکھلاہٹ ظاہر کر رہے ہیں۔ ہم دہشت گردی کے خلاف قوم کو متحد اور یکجا کرنے کی کوششوں میں مصروف ہیں جبکہ عمران خان اس مسئلے پر منفی اور اینٹی نواز شریف سیاست کر کے قوم کو ذہنی طور پر کنفیوز اور منتشر کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دھاندلی کا شور و غاغا کرنے والے کسی ایک حلقے میں بھی دھاندلی تو درکنار 200 ووٹ مسترد تک نہ کر وا سکے۔ لیکن ایک صوبے میں حکومت قائم کر لینے کے بعد بھی ان کی سیاست نواز دشمنی اور دھاندلی کے گرد گھوم رہی ہے ۔ مشاہد اللہ خان نے کہا کہ عمران خان قوم کو بتائیں کہ کیا انہیں خیبر پختونخوا کی حکومت بھی 11مئی کو ہونے والی تاریخی دھاندلی کے نتیجے میں ملی؟

PMLN strongly condemn RWP blast

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات سینیٹر مشاہد اللہ خان کی جانب سے راولپنڈی دھماکے کی شدید مذمت اور ہونے والی ہلاکتوں پر اظہار ِ افسوس ۔
امن کے دشمن متحرک ہوچکے ، دشمنوں کا مقصد امن کی کوششوں کو سبوتاژ کرنا اور ملک کو معاشی عدم استحکام سے دوچار کرنا ہے ۔
دھماکے اور دہشت گردی کی کارروائیاں ہمارا عزم کمزور نہیں کر سکتے۔

PM chairs meeting on Rawalpindi-Islamabad metro bus service

LAHORE, Jan 19 (APP): Prime Minister Muhammad Nawaz Sharif on Sunday chaired a meeting on the launch of the metro bus service in Rawalpindi-Islamabad. Punjab Chief Minister Shahbaz Sharif was also present. Project Director Sibtain Fazal Haleem, Chairman Planning and Development Irfan Elahi, Lahore Development Authority (LDA), Director General Ahad Cheema, Rawalpindi Commissioner Zahid Saeed, Highways Nespak Vice President Iftikhar Kazi, Prime Minister’s Secretary Javed Aslam, Planning and Development Secretary Hassan Nawaz Tarar and Capital Development Authority CDA Chairman Maroof Afzal attended the meeting. They briefed the Prime Minister about the project. (Courtesy: APP)

PM Nawaz Sharif urges Pak-Sri Lanka to conclude Comprehensive Economic Policy Agreement

Prime Minister Muhammad Nawaz Sharif has said Pakistan and Sri Lanka enjoy excellent relations and there is strong political will on both sides to promote cooperation in diverse fields.

He said this while talking to Sri Lankan Minister for Irrigation and Water Management Nimal Siripala De Silva‚ who called on him in Islamabad on Friday.

The Prime Minister stressed that both sides should work towards concluding Comprehensive Economic Policy Agreement by 2016 and encourage the private sector to invest in each other’s country.

Prime Minister Nawaz Sharif assured Pakistan’s continued support to Sri Lanka at International forums. Nimal Siripala De Silva expressed the confidence that relations between the two countries will further enhance in days to come.

PM Nawaz Sharif has summoned a special meeting of the Federal Cabinet to approve the Internal Security’s National Policy

All ministers of the Cabinet along with the Prime Minister will attend the meeting, to be chaired by PM Nawaz Sharif, in Islamabad on Monday, where a detailed briefing over the law and order situation of the country especially Karachi would be rendered to them.

The Cabinet agenda for Monday’s meeting comprises approval of the National Policy on Internal Security and demand of 28 billion rupees’ additional grant, for implementation of this policy, from the Interior Ministry, told sources.

Progress in process of talks with Taliban and overall economic and energy condition would also be reviewed by the Federal Cabinet in Monday’s meeting, added the sources.