PMLN on foreign policy of the govt

ماضی میں خارجہ پالیسی حکمرانوں کے ذاتی مفادات اور مصلحتوں کے تابع رہی
ہمارا موقف تمام قومی اور بین الاقوامی معاملات پر واضح اور دو ٹوک ہے
حکومت کی خارجہ پالیسی کا محور پاکستان کے سٹریٹجک اور معاشی مفادات کا تحفظ ہے
ماضی میں ڈرون حملوں پر دوغلی پالیسی اور دوہرے معیار کا مظاہرہ کیا جاتا رہا
واضح موقف اختیار کر کے ڈرون حملوں کا معاملہ اقوام ِ متحدہ اور اقوام ِ عالم کے سامنے اٹھایا

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات سینیٹر مشاہد اللہ خان نے کہا ہے کہ ماضی میں خارجہ پالیسی حکمرانوں کے ذاتی مفادات اور مصلحتوں کے تابع رہی ۔ آج ہمارا موقف تمام قومی اور بین الاقوامی معاملات پر واضح اور دو ٹوک ہے ۔ ہماری حکومت کی خارجہ پالیسی کا محور پاکستان کے سٹریٹجک اور معاشی مفادات کا تحفظ ہے ۔ مشاہد اللہ خان نے ان خیالات کا اظہار مرکزی سیکر ٹریٹ میں پارٹی کارکنان کے مختلف وفود سے ملاقات کے دوران کیا۔ انھوں نے کہا کہ آنے والے سالوں میں نوازشریف کے حالیہ دورہ امریکہ کے ملکی اور بین الاقوامی سطح پر گہرے اثرات مرتب ہوں گے ۔ ماضی میں ڈرون حملوں پر دوغلی پالیسی اور دوہرے معیار کا مظاہرہ کیا جاتا رہا نواز شریف نے اس کے برعکس اس مسئلے پر واضح موقف اختیار کر کے ڈرون حملوں کا معاملہ اقوام ِ متحدہ اور اقوام ِ عالم کے سامنے اٹھایا اور ہمارے موقف کو ہرسطح پر پذیرائی ملی۔ امید کرتے ہیں کہ امریکہ ڈرون حملوں پر جاری اپنی پالیسی پرنظر کرے گا۔ مشاہد اللہ خان نے کہا کہ ہم نے امداد لینے کی بجائے تجارت کو فروغ دینے کی بات کی ہے عوام کو مسلم لیگ (ن) کی معاشی پالیسیوںکے ثمرات جلد ملنا شروع ہوجائیں گے ۔

PMLN rules out the much talked about option of finding an “out of the box solution” to the Kashmir dispute

ISLAMABAD, Oct 22 (APP):Chairman Pakistan Muslim League (N) and Leeder of the house in Senate Raja Zafarul Haq Tuesday said Kashmir dispute was still alive on the United Nations agenda and Pakistan wanted to resolve it through peaceful means. Addressing press conference here at PML-N Secretariat, he said,India thinks that Kashmir is its integral part but Pakistan did not agree to this stance. He said India needed to resolve the Kashmir issue according to the UN resolutions as it is a core issue and can be settled through resolutions of the international body.
Indian foreign minister, he said, had consistently given statementsin response to the speech made by Prime Minister Muhammad Nawaz Sharif at the United Nations General Assembly.
He said Nawaz Sharif appealed to the world community to help Kashmiris in getting their right to self- determination.
Pakistan is desirous of peace in the region, he said adding Prime Minister Nawaz Sharif adopted a categorical stand on Kashmir issue.
Senator Zafarul Haq said that Pakistan would continue to raise the Kashmir issue at the forums available at the United Nations.
He said there are 23 agreements between Pakistan and India on the issue of Kashmir and India had agreed to them that it would not take any step which was against the United Nations resolutions.
Any agreement and the UN resolutions passed before Simla accord couldnot be revoked and these ramained valid until today as their status was still the same.
He said it is not possible that Pakistan and India could decide on their ownto ignore the UN resolutions, which grant Kashmiris the right to self-determination.
India had assured that it would not go against the decisions of the UN Security Council on Kashmir issue, he said adding Pakistan respects the decisions of UN Security Council and UN charter.
Raja Zafarul Haq said both the countries agreed in Simla accord to resolve matters through dialogue while Kashmir issue was also mentioned in the Lahore Declaration in which both countries had agreed to resolve all issues peacefully including Kashmir.
He said even within India voices were being raised, calling for the resolution of Kashmir dispute.
He said despite the presence of 700,000 Indian troops in Occupied Kashmir,Kashmiris had not bowed down before any repression and were firm in their struggle for liberation.

Mushahid Ullah Khan on the successful visit of PM NAWAZ SHARIF to the US

وزیر اعظم پاکستان محمد نواز شریف کا دورہ ءامریکہ اور نیویارک میں اقوام ِ متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب مستقبل میں مسائل کے حل کے حوالے سے اہم سنگ ِ میل ثابت ہوگا
وزیر اعظم نے تدبر اور بہترین حکمت عملی کا مظاہرہ کرتے ہوئے پاکستان کو درپیش مسائل کو کامیابی کے ساتھ اجاگر کیا
گزشتہ کئی سالوں کے دوران پہلی بار ڈرون حملوں پر مو ¿قف کو بھرپور تائید حاصل ہوئی
بھارت کے عام انتخابات کے نتیجے میں قائم ہونے والی حکومت اس جذبے کے ساتھ پاکستان کے ساتھ دست ِ تعاون بڑھائے گی

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات سینیٹر مشاہد اللہ خان نے کہا ہے کہ وزیر اعظم پاکستان محمد نواز شریف کا دورہ ءامریکہ اور نیویارک میں اقوام ِ متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب مستقبل میں مسائل کے حل کے حوالے سے اہم سنگ ِ میل ثابت ہوگا۔ انہوں نے کہا عالمی رہنماو ¿ں سے کامیاب ملاقاتوں اور جنرل اسمبلی سے خطاب کے دوران وزیر اعظم نے تدبر اور بہترین حکمت عملی کا مظاہرہ کرتے ہوئے پاکستان کو درپیش مسائل کو کامیابی کے ساتھ اجاگر کیا ۔ مشاہد اللہ خان نے کہا کہ دہشت گردی کی وجہ سے پاکستان کو درپیش مسائل پر عالمی برادری نے پاکستان کو بھرپور حمایت کا یقین دلایا اور گزشتہ کئی سالوں کے دوران پہلی بار ڈرون حملوں پر مو ¿قف کو بھرپور تائید حاصل ہوئی ۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم پاکستان کی بھارتی وزیر اعظم من موہن سنگھ کے ساتھ ملاقات بھی مستقبل میں دونوں ممالک کے درمیان تعلقات اور دیرینہ حل طلب اور متنازعہ امور طے ہونے میں مددگار ثابت ہوگی ۔ دنیا نے دیکھ لیا کہ پاکستان کی قیادت اور عوام بھارت سمیت خطے کے تمام ممالک کے ساتھ پرامن بقائے باہمی اور استحکام کے نہ صرف خواہش مند ہیں بلکہ اس سلسلے میں ہر سطح پر ہر پہلو سے بھرپور کردار ادا کرنے میں بھی مخلص ہیں ۔ مشاہداللہ خان نے امید ظاہر کی کہ بھارت کے عام انتخابات کے نتیجے میں قائم ہونے والی حکومت اس جذبے کے ساتھ پاکستان کے ساتھ دست ِ تعاون بڑھائے گی اور دونوں ممالک کشیدگی کم کر کے اپنے عوام کی خوشحالی کی خاطر امن کے قیام میں فعال کر دار ادا کریں گے ۔